زندگی میں دو بارہ جسم کے کسی حصے میں درد نہیں ہوگی

درد کوئی بیماری نہیں ہے میں اکثر ایک مثال دیتا ہوں اور مثال دے کر بتاتا ہوں ۔ گاڑ ی میں جا رہے ہو ا ور پیٹرول ختم ہو گیا تو گاڑی میں ایک سائرن بجنا شروع ہو جا تا ہے کہ لائٹ بتاتی ہے کہ آپ کی گاڑی میں جو پیٹرول ہے وہ ختم ہو رہا ہے۔ وہ گاڑی سائرن بجاتی ہے ۔ اور آپ کیا کرو گے اچھا کیا کر نا چاہیے تھا کہ چلنے سے پہلے اس میں تیل ڈلو ا لیتے۔ مگر آپ نے اس گاڑی میں تیل نہ ڈلو ا یا۔ تو اس میں کس کا قصور ہے ہمارا قصور ہے یا گاڑی کا۔ تو اسی طرح ہی ہماری باڈی کا حال ہے کہ ہماری باڈی میں جو بھی ہم ڈالیں گے وہ باہر ضرور نکلے گا ہمارے۔

اگر ہماری باڈی میں ہم ہماری اہمیت تبدیل کریں گے تو اس سے ہمارا ہی نقصان ہی ہوگا۔ جیسا کہ ہم سب ہی جانتے ہیں کہ ہم اپنی باڈی کو لے کر بہت ہی زیادہ لا پرواہ ہیں اور اس لا پرواہی کی ہی وجہ سے ہمارے جوڑ جو ہیں وہ خراب ہو جاتے ہیں کیونکہ ہم اس طرح کی خوراکیں کھاتے ہیں جو ہماری صحت کو خراب کرتے ہیں اور اس طرح سے ہمارا ہی نقصان ہو جاتا ہے کہ طرح طرح کی خوراکیں کھانے کی وجہ سے ہماری باڈی کو ہی نقصان پہنچتا ہے۔ ہمیں ہماری صحت کا خیال رکھنا چا ہیے تا کہ ہم طرح طرح کی بیماریوں سے بچ سکیں۔ ہم سے غلطی کیا ہوئی ہے کہ ہم نے کبھی بھی اپنی صحت کا خیال نہیں رکھا۔ جب ہمیں ہماری باڈی میں کسی بھی قسم کا درد ہوتا ہے۔

تو اس درد کو ختم کرنے کے لیے مختلف قسم کے پین کلرز کھاتے ہیں اور طرح طرح کے پین کلرز کھانے کی وجہ سے ہمارے جسم میں درد جو ہوتا ہے وہ ختم تو ہو جاتا ہے مگر وہ جو پین کلر ہوتا ہے وہ ہمارے جسم کو نقصان پہنچا جاتا ہے۔ پین کلر کا مطلب ہے دردوں کو مارنے والی اچھا درد تو مر جائے گی لیکن بتاؤ جس کی وجہ سے اللہ نے وہ درد دی کہ اس کی اصلاح کرو اس کو ٹھیک کرو۔ اور آپ نے درد کو ختم کر دیا درد تو وقتی طور پر ختم ہو گیا مگر ہمارے جسم میں اس کے اثرات تو موجود ہی ہوں گے نا۔ تو کیا ہو گا؟ اسی لیے سیانے لوگ اب بھی آج کے دور میں بھی کچھ سیانے لوگ ہیں جو کہ سمجھتے ہیں جو کہ کہتے ہیں کہ ہمیں جسم میں درد کس وجہ سے ہوا ہے وہ اس وجہ کو ٹھیک کرنے کی کوشش کرتے ہیں نا کہ درد کو ٹھیک کرنے کے پیچھے لگ جاتے ہیں۔ سمجھیے اس بات کو۔

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *