پستہ شوگر کے مریضوں اور موٹاپا کم کرنے میں کیسے مدد دیتا ہے ؟

پستہ کا شمار خشک میوہ جات میں کیا جاتا ہے۔ اس کی تاثیر گرم ہے۔ طبی ماہرین اسے دل کی دھڑکن کو کنٹرول کرنے اور معدے کو تقویت پہنچانے والا میوہ مانتے ہیں۔ اسے قے اور متلی کی صورت میں بھی استعمال کیا جاتا ہے۔ سردیوں میں کھانسی سے بچاؤ کے لیے پستہ بھی مفید ثابت ہوسکتا ہے۔ یہ پھیپھڑوں سے بلغم خارج کر کے انہیں صاف رکھنے میں مدد دیتا ہے۔ پستے میں کیلشئم، پوٹاشیم اور حیاتین بھی موجود ہوتے ہیں جو ہمارے جسم کے لیے ضروری ہیں۔ اسی طرح کاجو بھی ایک خوش ذائقہ میوہ ہے جس میں زنک کی کافی مقدار موجود ہوتی ہے۔پستے میں صحت کے لیے فائدہ مند چکنائی اور پروٹین، فائبر اور اینٹی آکسائیڈنٹس کی اچھی خاصی مقدار ہوتی ہےاس کے ساتھ ساتھ اس میں متعدد اہم اجزاء بھی ہوتے ہیں جس کو کھانے سے جسمانی وزن میں کمی لانے کے ساتھ دل اور معدے کی صحت کو بہتر بنانے میں بھی مدد ملتی ہےاس کا استعمال 7 ہزار قبل مسیح سے لوگ کررہے ہیں اور آئس کریم اور مختلف میٹھے پکوانوں میں بھی اس کو شامل کیا جاتا ہے۔صحت کے لیے فائدہ مند غذائی اجزا سے بھرپور:پستے بہت زیادہ پرغذائیت ہوتے ہیں

جس کے 28 گرام مقدار یا 49 دانوں میں درج ذیل غذائی اجزا جیسے 159 کیلوریز، 8 گرام کاربوہائیڈریٹس، 3 گرام فائبر، 6 گرام پروٹین، 13 گرام چکنائی (90 فیصد ان سچورٹیڈ فیٹس)، پوٹاشیم کی روزانہ درکار مقدار کا 6 فیصد حصہ پوٹاشیم، فاسفورس کی روزانہ درکار مقدار کا 11 فیصد حصہ، وٹامن بی سکس کی روزانہ درکار مقدار کا 28 فیصد حصہ، تھایامین کی روزانہ درکار مقدار کا 21 فیصد حصہ، کاپر کی روزانہ درکار مقدار کا 41 فیصد حصہ، میگنیز کی روزانہ درکار مقدار کا 15 فیصد حصہ موجود ہوتا ہے اسی طرح پستے وٹامن بی 6 سے بھرپور غذاﺅں میں سے بھی ایک ہے وٹامن بی 6 متعدد جسمانی افعال بشمول بلڈ شوگر کو کنٹرول کرنے اور ہیموگلوبن بننے وغیرہ کے لیے ضروری ہوتا ہے۔پستے مختلف طریقوں سے امراض قلب کا خطرہ کم کرتے ہیں اینٹی آکسیڈنٹس کے ساتھ ساتھ یہ گری بلڈ کولیسٹرول میں کمی اور بلڈ پریشر کو بہتر کرسکتی ہے جس سے بھی امراض قلب کا خطرہ کم ہوتا ہےمختلف تحقیقی رپورٹس میں ثابت ہوتا ہے کہ پستے کولیسٹرول کی سطح میں کمی لانے میں مدد دے سکتے ہیں نقصان دہ کولیسٹرول کے شکار افراد پر ایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ پستے کھانے سے کولیسٹرول کی شرح میں 9 فیصد کمی دیکھنے میں آئی جبکہ دن کی 20 فیصد کیلوریز اس گری سے حاصل کرنا کولیسٹرول کی شرح میں 12 فیصد تک کمی آسکتی ہے۔پستے کو جسمانی وزن میں کمی کے لیے بہترین غذاﺅں میں سے ایک مانا جاتا ہے.

اور پستے بھی ان میں سے ایک ہیں جس کے بارے میں زیادہ تحقیقی رپورٹس تو موجود نہیں مگر نتائج کافی حوصلہ افزا ہیں پستے فائبر اور پروٹین سے بھرپور ہوتے ہیں اور یہ دونوں ہی پیٹ کو بھرنے کا احساس بڑھانے کے ساتھ کم کھانے میں مدد دیتے ہیں ایک تحقیق کے دوران روزانہ 53 گرام پستے کھانے سے جسمانی وزن میں نمایاں کمی دیکھنے میں آئی محققین کے خیال میں اس کی ایک ممکنہ وجہ اس میں موجود چکنائی ہے جو پوری طرح جسم میں جذب نہیں ہوتا۔ چھلکوں والے پستے کھانے میں وقت زیادہ لگتا ہے اور ان چھلکوں کو دیکھ کر معلوم ہوجاتا ہے کہ کتنی گریاں کھائی ہیں۔کاربوہائیڈریٹس کی زیادہ مقدار ہونے کے باوجود پستے کم گلیسمک انڈیکس والی غذاﺅں میں شامل ہے یعنی اس سے بلڈ شوگر تیزی سے نہیں بڑھتا تحقیقی رپورٹس کے مطابق پستے صحت مند بلڈشوگر لیول کو برقرار رکھنے میں مدد دیتا ہےایک تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ کھانے کے بعد 56 گرام پستے کھانا صحت مند بلڈ شوگر ردعمل دینے کے ساتھ اس میں 20 سے 30 فیصد کمی آتی ہے ایک اور تحقیق میں دریافت کیا گیا کہ ذیابیطس ٹائپ ٹو کے مریضوں کی جانب سے اس گری کے استعمال سے خای پیٹ بلڈ شوگر 9 فیصد کمی آتی ہے تو پستوں کا اپنی غذا میں اضافہ طویل المعیاد بنیادوں پر بلڈ شوگر لیول کو کنٹرول کرنے میں مدد دے سکتا ہے۔اللہ ہم سب کا حامی وناصر ہو۔آمین

Sharing is caring!

Categories

Leave a Reply

Your email address will not be published. Required fields are marked *

bullet force multiplayer unblocked shell shockers unblocked